Global News Pakistan
GNP is Pakistan’s first ever ‘Multilingual News Agency’ which aims to provide a platform for disseminating news in national, regional & international languages.

The question of Palestine; from vocal to practical support

by Seyed Mohammad Ali Hosseini

0 168

by Seyed Mohammad Ali Hosseini
Ambassador of Islamic Republic of Iran
on the occasion of Quds week

A brief History:
Palestine was among former Ottoman territories placed under UK administration by the League of Nations in 1922. The British Mandate incorporated the “Balfour Declaration” of 1917, expressing support for “the establishment in Palestine of a national home for the Jewish people”. During the Mandate, from 1922 to 1947, large-scale Jewish immigration, mainly from Eastern Europe took place, the numbers swelling in the 1930s with the Nazi persecution. Benefiting from false and inapplicable slogans like “A land without a people for a people without a land”, and US absolute support, these large migrations, coinciding with plunder of Palestinian properties and infringement of their essential rights by the occupiers, finally resulted in the establishment of the Zionist regime.

Following the illegal acts of Britain during the trusteeship period, in 1948 the Zionist regime was recognized by the United States and later by other countries such as the former Soviet Union, whereas the people of the territory of Palestine were never consulted about their fate. In fact, the Zionist regime was established without allowing the native population of the territory of Palestine to exercise their right to self-determination.
The measures that led to the formation of the Zionist regime were contrary to international law. According to Article 22 of the Covenant of the League of Nations, Britain had no sovereignty over Palestine and should have allowed the exercise of the right to self-determination, namely holding a free referendum with the participation of all inhabitants of Palestine. Not only this important didn’t happen, but maximum pressures like subjugation of opponents, enforced displacement the Palestinian intellectuals, evacuation of indigenous Palestinians from their homeland and many other ferocious actions occurred against them.

Negligence of the then big powers to the Islamic countries demands for resistance to and cease of immigrations coincided with violence against people of Palestine and lead to conflicts in the area. During this asymmetric conflict, the occupier was endowed with highest military technology and arsenals while people of Palestine just had some stones in their hands to throw. People of Palestine were losing both their land and entity and Zionists were reaching both power and lands by usurpation.

Lack of comprehensive solutions:
From that time, some proposals were offered to the UN to whitewash heinous crimes perpetrated by expansionist Zionists in Palestine; also different resolutions were issued to orally condemn the Zionist regime atrocities in international and regional organizations that none of them lead to a breakthrough for the sake of oppressed people of Palestine.

Organization of Islamic Cooperation (OIC) that the philosophy of its establishment in 25 September 1969 (following the criminal arson of Al-Aqsa Mosque in occupied Jerusalem) was to support Palestine, has so far miserably failed to liberate the long-persecuted Palestinians from the yoke of imperial Zionist regime due to its members divisions and negative role of interventionists. The defeat of proposed plans and ratified resolutions that supposedly wanted to bringing peace and stability for the Palestine, paved the ground for the Zionist regime to first occupy and then annex Gaza Strip and the West Bank (including East Jerusalem) that resulted in great exodus of Palestinians to other countries. Unsuccessful attempts of the UN in defending the Inalienable Rights of the Palestinian People for self-determination, national independence, sovereignty, and returning their homeland, forced the Palestinians to resort to first and Second Intifada.

From the struggle inception till today, Palestinians are yearning for international support for their need to at least oppose Zionist settlements and Zionist actions in changing the status of Jerusalem, and they are also longing for their right for realization of other internationally recognized legitimate, inalienable rights enshrined in international conventions like ICCPR(International Covenant on Civil and Political Rights) and ICESCR(International Convention on Economic, Social and Cultural Rights).

From the time that Palestine question referred to multilateral organizations till now, Islamic countries rendered some efforts to push these organizations towards full realization of Palestinian rights but due to US obliterations most of the UN decisions and resolutions came fanatically in favor of Zionists and with minimum attention to Palestinian rights. Putting aside the unjust and one-sided approaches in most of UN initiatives (From Human Rights Commission to Human Rights Council and from UN Security Council to the subsidiary bodies of General Assembly), even these minimum rights of Palestinians faced considerable impediment to reach tangible results.

These facts show that avaricious Zionists and their supporters were not even ready to grant minimum advantages to Palestinians in the above mentioned efforts. History is a good witness of the fact that how US locked Human Rights Commission because this organization was seriously condemning the brutal activities of Zionist regime in Palestinian lands. As the UN went weaker in helping the Palestinians and western countries more blind on brutalities, Zionist regime utilized further savage in violating the rights of these defenseless people. The atrocities even went severe by seeing the full support of US behind its bully approaches and infringement of internationally recognized rules and procedures.

What more deteriorated the situation for Palestinians was the passive gesture of some Arab states towards new agendas leading sweeping the question of Palestine under the rug of betrayal. One of the recent efforts for sweeping the issue was the doom Trump so-called peace plan entitled “Deal of the Century” that not only doesn’t have any landscape for prosperity and stability for Palestinians but makes Zionist regime more vigorous to claim new territories for annexation. No different looking at the Deal as a “smokescreen” for annexation or “slap of the century”; this plan won’t bring any amelioration for the already struggle stricken situation.

A glance at Islamic Republic of Iran reaction to the Question of Palestine
On August 7, 1979, the founder of Islamic Revolution in Iran and the then Supreme leader, Imam Khomeini, declared the last Friday of the holy month of Ramadan each year as Quds Day, in which Muslims worldwide would unite in solidarity against Zionist regime and in support of the Palestinians and declared the “liberation” of Jerusalem/Al-Quds a religious duty to all Muslims.

Besides this symbolic collective movement, Iran spared no efforts to comprehensively support Palestinian resistance against suppression and plunder. The main support of Iran was a spiritual one and comprises a wide range of issues from helping the Palestinian voices to be heard in multilateral forums to enforce the rights-seeking spirit of these people. These kind of supports made people of Palestine more confident to fulfill their rights for self-defense that is well acclaimed in article 51 of the UN charter.

Considering the inefficiency and oppressive nature of previously suggested plans for the question of Palestine, Iran presents a precise and well measured plan entitled “National Referendum in Palestine” to the UN for the salvage of the issue. In this plan, Iran clearly proposes a platform that provides the grounds for the true and original people of Palestine to exercise their right to self-determination.

According to this initiative, that is in full compliance with United Nations Charter and rules of international law, particularly international humanitarian law and human rights, all the authentic people of Palestine including the followers of all religions (including Muslims, Christians and Jews) who inhabited in Palestine before the issuance of the Balfour Declaration will hold a national referendum and establish a political system by majority that will decide on the status of the non-indigenous residents of Palestine. The main requirement of this initiative, is the return of indigenous Palestinians refugee to their homeland; something that is both the request of people of Palestine and UN resolutions.

As mentioned before, Iran spared no effort to support Palestine and incurred many costs and loses during this path. During past decades Iran has suffered a lot from US unilateral sanctions, it’s illegal act of defamation and designation of Iranian defensive unit (Al-Quds Force) and terror of Iranian high ranking military officials like “Shahid Al Quds” Brigadier General Qassem Suleimani who within the context of international rules was supporting the oppressed peoples in the region and standing against terrorism, oppression and occupation. In spite of these sacrifices and hardness, the vigilant nation of Iran beside other observant consciences around the world are still firmly standing for the goal of independent, sovereign and free Palestine.

Conclusion:
It is a source of grave concern that after seven decades, the question of Palestine is still unresolved and the international community has failed to settle this chronic complicated crisis. Considering the inattention and inefficiency of the UN in helping the Palestinians to gain their rights, Islamic Ummah should according to their Islamic mandate, consolidate and take firm stance against cunning expansionist Zionist regime that has nothing except massacre, terror, destruction, violation to Islamic sanctities and so forth for our region.
In support of Palestine and Al- Quds Al-Sharif and resonating with Imam Khomeini, we also today, like the previous years, consecrate the last Friday of the holy month of Ramadan as Al-Quds Day and proclaim the global solidarity of Muslims in support of the legitimate rights of the Muslim people of Palestine.

مسئلہ فلسطین: زبانی سے عملی حمایت کی مختصر تاریخ

فلسطین عثمانی سلطنت کا حصہ تها جو 1922 میں لیگ آف نیشنز کی طرف سے انگلستان کی سرپرستی میں دیا گیا. اس علاقه کے کنٹرول کیلئے انگلستان کے مینڈیٹ پر مبنی طریق کار کے تحت 1917 میں “بالفورڈ ڈیکلریشن” جاری کیا گیا جسکے ذریعہ فلسطینی سرزمین کو تبدیل کرکے اسے یہودیوں کی اصلی اور قومی سرزمین قرار دے دیا گیا. مذکوره مینڈیٹ کے طریق کار سے 1922 سے 1947 کے دوران یہاں پوری دنیا اور خصوصا مشرقی یورپ سے بڑے پیمانہ پر یہودیوں کی ہجرت عمل میں آئی. جبکه تیس کی دھائی میں نازیوں کے مظالم نے اس ہجرت میں نمایاں اضافه کیا. وسیع پیمانے پر ہجرت، فلسطینیوں کی املاک اور اموال کی لوٹ مار، ان کے انفرادی حقوق کی پامالی، “قوم کے بغیر زمین اور زمین کے بغیر قوم کیلۓ” جیسے غلط اور غیر منطقی نعروں اور امریکا کی طرف سے غاصبوں کی ٹھوس حمایت سے آخر کار صیہونی ریاست کا قیام عمل میں آیا.

انگلستان کی زیر سرپرستی مدت کے دوران برطانیه کے غیر قانونی اقدامات کے بعد 1948 میں امریکه کی طرف سے اور پهر سویت یونین کی طرف صیہونی ریاست کو تسلیم کر لیا گیا. یه اقدام اس طرح عمل میں لایا گیا که فلسطین اور اس خطه کے اصلی باشندوں‌ سے ان کے حق خود ارادیت اور ان کے مستقبل کے بارے میں کسی قسم کی مشاورت کی زحمت گوارا نہیں کی گئی. درحقیقت صیہونی حکومت کا قیام اس حال میں عمل میں آیا که فلسطین کےاصلی باشندوں کو اپنے مستقبل کے تعیین کا حق نہیں دیا گیا. وه تمام اقدامات جن کا نتیجہ صیہونی حکومت کی شکل میں ظاہر ہوا، زمانه کے رائج تمام بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی تهے. لیگ آف نیشنز کے منشور کے آرٹیکل 22 کے تحت انگلستان کو فلسطین پر کسی قسم کی حاکمیت کے حقوق و اختیار حاصل نہیں تھے اور اسے چاہیے تھا که ایک ایسے ریفرنڈم کے ذریعه اس سرزمین کے تمام باشندوں کو ان کے حق خود ارادیت کے اظهار کا موقع فراہم کرتا. جبکه نه صرف یہ کہ ایسا نہیں ہوا بلکه زیاده سے زیاده دباؤ کے نظریه کے تحت مخالفین کی سرکوبی، فلسطینی دانشوروں کی ان کے گھروں سے جبری بیدخلی، فلسطین کی سرزمین کو اصلی باشندوں سے خالی کرانا اور اس جیسے دوسرے پر تشدد اقدامات بهی عمل میں لائے گئے.

ہجرت کو روکنے سے متعلق اسلامی ممالک کی درخواست پر بڑی طاقتوں کی بے پروائی، دیگر اقدامات پر سستی اور اس کے نتیجه میں بے تحاشا مسلسل ہجرت اور عین اسی دوران فلسطینی عوام کے خلاف تشدد کا نتیجه دشمنی اور نفرت کی صورت میں اس سارے خطه میں ظاہر ہوا. اس غیر متناسب جهگڑے کے دوران غاصب افواج کو اسلحه کی جدید ترین ٹیکنالوجی اور بڑے ذخائر سے نوازا گیا لیکن فلسطین کے ستم رسیدہ عوام کے ہاتهوں میں صرف وه چهوٹے پتهر تهے جنہیں وه احتجاج کے طور پر پهینک رہے تهے. اس کے ساتھ ساتھ فلسطینی عوام روز بروز اپنی زمینوں سے بیدخلی اور اپنی شناخت کو ختم ہوتا دیکھ رہے تهے جبکه صیہونی روز بروز طاقتور بهی ہو رہے تهے اور زیاده سے زیاده زمینیں بهی ہتهیا رہے تهے۔

جامع حل کا فقدان

اس وقت سے آج تک غاصبوں کے بدترین جرائم کو بے نقاب کرنے کیلئے اقوام متحده کو مختلف تجاویز دی جاتی رہیں اور مختلف عالمی اور علاقائی فورم پر صیہونی ریاست کے ظالمانہ ہتهکنڈوں کی زبانی اور لفظی مذمت کیلۓ کئی ایک قرار دادیں بهی پاس کی گئیں لیکن ان میں سے کوئی بهی فلسطین کے مظلوم عوام کے حق میں کامیابی نه ہو سکی.

اسلامی تعاون تنظیم جو که 1969 میں بیت المقدس پر مجرمانه حمله کے بعد 25 ستمبر 1969 کو فلسطینیوں کی حمایت کے نظریہ کے تحت وجود میں آئی، ابتک فلسطینیوں کی آزادی اور خودمختاری کے مقصد کو حاصل نہیں کر سکی اور فلسطینی دهائیوں سے صیہونی ریاست کی قید میں ہیں، اس ناکامی کی بڑی وجه ان کے ارکان کے درمیان اختلافات اور دخل انداز عناصر کا تخریبی کردار ہے. فلسطین کے استحکام اور اس کے قیام کیلۓ پیش کی گئی تجاویز اور پاس کی گئی قراردادوں کی ناکامی نے صیہونی حکومت کا راسته ہموار کیا ہے تا که پہلے مرحلے میں قبضه کو مضبوط کرکے پهر غزه کا کنارہ اور مغربی پٹی کو اپنے مقبوضه علاقه کےساتھ ضم کر سکے. اس تمام عمل کا نتیجه فلسطینیوں کے بےگهر اور دوسرےممالک میں مہاجر هونے کی صورت میں ظاهر ہوا. فلسطینی عوام کے ٹھوس مطالبات خود ارادیت ، قومی خودمختاری، حق اقتدار اور اپنی سرزمین پر واپسی کے حقوق حاصل کرنے کیلئے اقوام متحدہ کی کوششوں کی ناکامی نے انہیں پہلے انتفاضه اول اور اب انتفاضه دوم جیسی تحریکوں کی راه دکهائی.

فلسطینی سرزمین پر محاذ آرائی کے آغاز سے اب تک اسلامی ممالک کی طرف سے مذکوره تنظیموں کو فلسطینی عوام کے مکمل حقوق بحال کرنے پر مجبور کرنے کیلیۓ کوششیں عمل میں لائی گئی ہیں لیکن امریکه کی طرف سے تخریبی کردار اور اقوام متحده کی فیصله سازی می دخل اندازی کی بدولت، فلسطینی عوام کے حقوق پر انتہائی کم توجه دی جا پائی ہے حتی که یه کم ترین توجه اور کم سےکم حقوق جو که مذکوره بین الاقوامی تنظیموں کی طرف سے مشاہدہ کئے گئے ، جن میں انسانی حقوق کمیشن، انسانی حقوق کونسل، سلامتی کونسل، جنرل اسمبلی وغیره، نفاذ کے مراحل میں موجود رکاوٹوں کی وجه سے بهی اپنے مطلوبه نتائج حاصل نه کر سکی ہیں۔

ان واقعات سے یه واضح ہوتا ہے که صیہونی لالچی حکومت اور اس کے حامی اقوام متحده کے فیصلوں اور حکمت عملیوں کے تحت کم سے کم سہولت بهی فلسطینیوں کو دینے پر آماده نہیں ہے . تاریخ بخوبی گواه ہے که فلسطین میں صیہونی حکومت کے وحشیانه غیر انسانی اقدامات کی مذمت کرنے پر امریکه نے انسانی حقوق کمیشن کو کس طرح بند گلی میں لا کهڑا کیا ہے. فلسطینیوں کی امداد پر اقوام متحده کی بے بسی کے ساتھ ساتھ، مغربی ممالک کی صیہونی حکومت کے بڑھتے ہوۓ مظالم سے چشم پوشی سے غاصب حکومت پہلے سے کہیں بڑھ کر فلسطین کے معصوم عوام کےحقوق پامال کرنے میں جت گئی. اس مجرم حکومت نے امریکه کی پشت پناہی سے اپنی بدمعاشی اور بین الاقوامی سطح پر معروف اقدار کی پامالی کا عمل بڑھا دیا هے.

عرب ممالک کی طرف سے اس نئے ایجنڈےکے سامنے غیر فعال رد عمل سے فلسطینیوں کیلۓ پہلے سے کہیں زیاده مشکل حالات پیدا ہوۓ، جس کا مقصد مسئله فلسطین کو ہمیشه ہمیشه کیلۓ دفن کرنا ہے. اس نۓ ایجنڈے میں سے ایک ڈونالڈ ٹرمپ کی ڈیل آف دا سینچری والی تجویز ہے جو که شروع ہونے سے پہلے ہی ناکام ہو چکی ہے. کیونکه اس میں فلسطینیوں کیلۓ کسی استحکام اور ریلیف کی کوئی جهلک موجود نہیں ہے. بلکه صیہونی حکومت کو دوسری سرزمینوں کو اپنے ساتھ ضم کرنے کےدعووں کی بھی حوصله افزائی کرتی ہے. اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا که مذکوره ڈیل والی تجویز کو دوسری سرزمینوں کو ہڑپ کرنے کا لباده اوڑھنا کہیں یا اس صدی کا سب سے بڑا تهپڑ! اہم بات یه ہے که اس تجویز سے موجوده بحران اور جنگی حالات پر کوئی مثبت تبدیلی رونما نہیں ہو سکتی.

مسئله فلسطین کے متعلق ایرانی ردعمل پر ایک نظر:

اسلامی جمہوریه ایران کے بانی اور رہبر امام خمینی (رہ) نے سات اگست 1979 کو ماه رمضان کے آخری جمعه کو یوم قدس کے طور پر منانے کا اعلان کیا تا که پوری دنیا کے مسلمان ایک دوسرے کے ساتھ متحد ہو کر صیہونی حکومت کی مذمت اور مظلوم فلسطینی عوام کیساتھ اظهار یکجہتی کریں. امام خمینی (ره) نے اسکے ساتھ ہی فلسطین کی آزادی کو هر مسلمان کا مذہبی فریضه قرار دیا ہے.

اس اجتماعی اور علامتی اقدام کے علاوه ایران نے غارت گری اور سرکوبی کیخلاف فلسطین کی تحریک مزاحمت کی حمایت کا کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے نہیں دیا. ایران کی طرف سے سب سے اہم حمایت، روحانی اور مجازی حمایت ہے جس کے تحت مختلف مسائل اور موضوعات کا وسیع احاطه کیا گیا، جس کے تحت فلسطینیوں کی آواز پوری دنیا تک پہنچانے، کئی طرفه فورموں اور فلسطینیوں کے اپنا حق لینے کے جذبے کی تقویت قابل ذکر ہیں. اس حمایت کے نتیجه میں فلسطینی عوام اپنے ان حقوق کے تحفظ کیلۓ جو که اقوام متحده کے منشور کے آرٹیکل 51 میں بهی درج ہوۓ ہیں، یک سو ہو کر جدوجہد کو جاری رکھے ہوئے ہیں.

مسئله فلسطین کے حل کیلئے اس سے پہلے پیش کی گئی تجاویز کے کارآمد نه ہونے اور امتیازی ہونے کے پیش نظر، اسلامی جمہوریه ایران نے اقوام متحده کو “فلسطینی قومی ریفرنڈم” کےعنوان سے ایک جامع تجویز پیش کی ہے جس میں واضح طور پر فلسطینیوں کے حق خود ارادیت کے حصول کا نقشہ مہیا کیا گیا ہے. یه حکمت عملی مکمل طور پر اقوام متحده کے منشور اور دوسرے بین الاقوامی قوانین، جیسا که انسانی حقوق اور دوستانه انسانی حقوق کے مطابق ہے. کہ وه تمام فلسطینی جس میں مسلمان، یہودی اورعیسائی شامل ہیں جو رنگ، نسل اور مذہب کی تفریق کے بغیر بالفور ڈیکلئریشن سے پہلے اس سرزمین پر آباد تهے، وه اس قومی ریفرنڈم کو منعقد کریں گے اور اس کے نتائج کی بنیاد پر سیاسی نظام تشکیل پاۓ گا جو که تارکین وطن کے بارے میں فیصله کریگا. اس تجویز کے نفاذ کیلۓ ضروری ہے که وه فلسطینی عوام جو اس سرزمین کے اصلی باشندے اور اصلی مالک ہیں اور ہجرت اور پناه کے طور پر دوسرے ممالک اور علاقوں میں ره رہے ہیں، وه تمام افراد اپنے آبائی علاقوں میں واپس لاۓ جائیں. جبکه اس بات کا تقاضا خود فلسطینی عوام نے بهی کیا ہے اور اقوام متحده کی قراردادوں میں بهی اس کی طرف اشاره کیا گیا ہے.

جیسا که پہلے بهی اشاره کیا که ایران نے فلسطینیوں کی حمایت کیلئے کسی بهی کوشش اور موقع کو ہاتھ سے جانے نہیں دیا اور اس راستے پر بہت سے اخراجات اور قربانیاں پیش کر چکا ہے. گذشته دہائیوں میں ایران نے فلسطینی کاز کی حمایت کی وجه سے بہت زیاده دباؤ کا سامنا کیا ہے. امریکه کی طرف سے یکطرفه پابندیاں ، امریکه کی طرف سے ایران کو بدنام کرنے اور مسلح افواج کو دہشتگرد ظاہر کرنے کا غیر قانونی اقدام، جیسا که “قدس فورس”، اعلی ایرانی فوجی حکام کو نشانه بنانا، قدس کے شہید سردار قاسم سلیمانی، جس شخص نے بین الاقوامی قوانین کے فریم ورک کے اندر، خطه کے مظلوم عوام کی حمایت کی اور دہشتگردی، استحصال اور قبضه کیخلاف ڈٹ کر اپنا کردار ادا کیا. ان دشواریوں اور قربانیوں کے باوجود ایران کی بیدار قوم، پوری دنیا کے باضمیر لوگوں کیساتھ ملکر فلسطینی کاز کے تحفظ کیلئے ثابت قدم ہے. جو که خودمختاری، آزادی اور عوام کا اقتدار ہے.

حاصل گفتگو:

یه بات گہرے دکھ کا باعث ہے که سات دہائیوں کے بعد بهی مسئله فلسطین حل نہیں ہوا اور عالمی معاشره بهی اس منفرد اور پیچیده بحران کے سامنے بے بسی محسوس کر رہا ہے.

اقوام متحده کے اقدامات کے غیر موثر اور غیر اھم ثابت ہونے کے پیش نظر، امت مسلمہ فلسطینیوں کی مدد اور ان کے حقوق کی بحالی کیلئے اپنے دینی فرائض کے مطابق یکجہتی کے ساتھ متحد ہو جاۓ اور اس صیہونی دھوکہ باز اور غاصب حکومت کیخلاف ایک ٹهوس موقف اختیار کرے جس کے پاس قتل عام، تباہی، اسلامی مقدسات کی توہین وغیرہ کے سوا ہمارے خطه کیلۓ اور کچھ نہیں ہے.

فلسطین اور قدس شریف کی حمایت کیلۓ دنیا بهر کےمسلمان آج بهی گذشته سالوں کی طرح، امام خمینی (ره) کی آواز پر لبیک کہتے ہیں اور فلسطینی عوام کے جائز حقوق کی حمایت میں رمضان المبارک کے آخری جمعه کو یوم قدس کے طور پر منائیں گے.

سید محمد علی حسینی

پاکستان میں تعینات اسلامی جمہوریہ ایران کے سفیر

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Leave A Reply

Your email address will not be published.